اللہ تعالیٰ سب بیٹیوں کے نصیب اچھے کر ے.

شادی کی پہلی رات خاوند کمرے میں داخل ہوا اور کمرے کا دروازہ بند کر کے بیوی کے قریب آ کر بیٹھ گیا۔ سب سے پہلے اس نے اپنی بیوی کو سلام کیا اس کے بعد پانچ ہزار حق مہر دینے لگا۔ بیوی نے کہا میں نے حق مہر نہیں لینی میں آپ کو معاف کرتی ہوں خاوند نے دوسری بار حق مہر دینے کی کوشش کی بیوی نے یہ ہی جواب دیا، پھر خاوند نے تیسری بار حق مہر دینے کی کوشش کی بیوی نے پھر وہ ہی جواب دیا۔

خاوند نے وہ پیسے اپنے بٹوے میں رکھ دیۓ اور چند منٹوں کے لیے سوچوں میں گم ہو گیا۔ کہ کتنی توکل والی اور وفا والی بیوی ہے جو پیسوں سے زیادہ مجھے ترجیح دے رہی ہے۔ اس کے بعد خاوند نے منہ دیکھاٸی کے لیے بیوی کو پانچ ہزار دیۓ بیوی نے منہ نہ دیکھایا پھر خاوند نے دس ہزار دیۓ بیوی نے منہ نہ دیکھایا، پھر خاوند نے پندرہ ہزار دیۓ بیوی نے منہ نہیں دیکھایا۔ پھرخاوند نے بیس ہزار دیۓ بیوی نے منہ نہیں دیکھایا پھر پچیس، تیس، چالیس حتی کہ خاوند نے پچاس ہزار دیا بیوی نے منہ نہ دیکھایا۔ خاوند نے تنگ آ کر پورا بٹوہ بیوی کے حوالے کر دیا جس کے اندر ایک لاکھ روپے تھے پھر بھی بیوی نے منہ نہیں دیکھایا۔ خاوند نے بیوی سے کہا  آپ کو اور کیا چاہیے بیوی نے کہا ایک وعدہ خاوند نے کہا کون سا وعدہ بیوی نے کہا مجھ سے ایک وعدہ کرو مجھے کھبی چھوڑوں کے تو نہیں خاوند نے شادی کی پہلی رات بیوی کو نہ چھوڑنے کا وعدہ کر لیا۔ یہ لڑکی کوٸی عام لڑکی نہیں تھی بلکہ اس نے ایم اے اردو کر رکھا تھا اور اس کے والدین نے داماد سے ضمانت کی طور پر پانچ لاکھ یا دس لاکھ بھی نہیں لکھوایا تھا۔ ایسی عورتیں نصیب والے مردوں کو ملتی ہیں جو صرف خاوند سے پیار کرتی ہیں ان کی نظر میں پیسوں کی کوٸی اہمیت نہیں ہوتی۔ ایسی بیویاں معاشرے کے لیے رول ماڈل ہیں جن کی وجہ سے ہمارہ معاشرہ چل رہا ہے چاہت خلوص کی کچھ کم نہ تھی کم شناس لوگ دولت پر مر گۓ اللہ تعالیٰ سب بیٹیوں کے نصیب اچھے کر ے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

shares