جس کے گھر میں بھی جوان لڑکی ہے، اور وہ لڑکی

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) بغداد کے خلیفہ نے اپنےبیٹے کی شادی کرنا تھی۔ لڑکی ڈھونڈنے کےلئے انہوں نے ایک تجویز سوچی، اور پورے بغداد شہر میں انہوں نے اعلان کیا۔ کہ جس کے گھر میں بھی جوان لڑکی ہے، اور وہ لڑکی حافظ قرآن ہو تو آج رات وہی گھر والے اپنے کھڑکیوں میں شمع روشن رکھے۔رات کے وقت جب خلیفہ اپنے گھر سے نکلا، تو وہ دیکھتا ہے کہ پورے بغداد شہر کے گھروں کی کھڑکیوں میں شمع روشن ہے۔ اب خلیفہ کے لیے فیصہ کرنا مشکل ہوگیا۔

ﺍﮔﻠﮯ ﺩﻥ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻟﮍﮐﯽ ﺣﺎﻓﻆ ﻗﺮﺁﻥ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻮﻃﺎ ﺍﻣﺎﻡ ﻣﺎﻟﮏ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﺣﺎﻓﻈﮧ ﮨﮯ، ﻭﮦ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﮐﮭﮍﮐﯽ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﻊ ﺭﻭﺷﻦ ﮐﺮﮮ۔ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﺑﮭﯽ ﺁﺩﮬﮯ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﮐﮭﮍﮐﯿﻮﮞ ﭘﮧ ﺷﻤﻌﯿﮟ ﺭﻭﺷﻦ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﮐﺘﻨﺎ ﺣﺴﯿﻦ ﻣﻨﻈﺮ ﮨﻮﮔﺎ…!!! ﮨﺮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﮍﮐﯽ ﭘﮧ ﺭﻭﺷﻦ ﺷﻤﻊ ﺻﺮﻑ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﯽ ﻧﻮﯾﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻨﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺑﺘﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﺎ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﺭﻭﺷﻦ ﮨﮯ۔ ﻭﮦ ﺷﻤﻌﯿﮟ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﻧﻮﯾﺪ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﻧﺴﻞ ﮐﻮ ﭘﺮﻭﺍﻥ ﭼﮍﮬﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟئے ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺩﯼ ﺟﺎ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺟﻠﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺭﻭﺷﻨﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺮﺯﺗﮯ ﺷﻌﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﯽ ﺟﮭﻠﮏ ﻧﻤﺎﯾﺎﮞ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺁﺝ ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺑﮩﺖ ﮐﻢ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﻊ ﺭﻭﺷﻦ ﮨﻮ ﮔﯽ،ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺍﻋﻼﻥ ﻭﺍﻟﯽ ﺷﺮﻁ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮐﮫ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﯾﻘﯿﻨﺎ ﭘﻮﺭﺍ ﺷﮩﺮ ﮨﯽ ﺗﺎﺭﯾﮏ ﭘﮍﺍ ﮨﻮ ﮔﺎ۔ ﭘﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ…؟ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺁﺝ ﮨﻤﯿﮟ ﻓﻀﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﭼﮑﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﻨﺴﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺝ ﮐﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﻣﺮﺩ ﮐﮯ ﺷﺎﻧﮧ ﺑﺸﺎﻧﮧ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺧﻮﺍﺏ ﺩﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺣﺴﺎﺏ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﮯ ﺑﮭﻨﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﺩﮬﻨﺴﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺝ ﮐﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﯽ ﺣﺎﻣﻞ ﻧﺴﻞ ﮐﯽ ﺗﺮﺑﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﺍﮨﻢ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﮨﻢ ﻣﻘﺎﺻﺪ ﺳﮯ ﺑﮭﭩﮑﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺝ ﮐﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﭨﯽ ﻭﯼ ﭘﮧ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﮯ ﻣﺎﺭﻧﻨﮓ ﺷﻮﺯ ﻣﯿﮟ ﻓﻀﻮﻝ ﻋﻨﻮﺍﻧﺎﺕ ﭘﮧ ﻣﺒﺎﺣﺚ ﺍﻭﺭ ﻓﻀﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﻣﻘﺼﺪ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﭘﻨﯽ ﮨﯽ ﺟﯿﺴﯽ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺭﺍﻏﺐ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺝ ﮐﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﺍﻧﻌﺎﻣﯽ ﻣﻘﺎﺑﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﯿﻨﺎ ﺟﮭﭙﭩﯽ ﮐﺮﮐﮯ ﺩﻭ ﭨﮑﮯ ﮐﮯ ﺗﺤﻔﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺝ ﮐﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺑﮭﭩﮑﻨﺎ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﺑﮭﭩﮑﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *