زنا ایک قرض ہے اور یہ ادا ہوگا آپ کے کسی اولاد میں سے

تفسیرو روح البیان ایک واقعہ کا ذکر کیا گیا ہے کے شہر بخارہ میں ایک آدمی سونے کا کاروبار کرتا تھا اس کی دوکان بہت مشہور تھی اس جیولر کے ایک بہت ہی خوبصورت اور نیک بیوی تھی ایک سقا ہر روز اس کی گھر کو پانی لایا کرتا تھا وہ تیس سال سے اس کے گھر کو پانی لاتا تھا وہ بہت ہی بااعتماد شخص تھا ایک دن پانی لانے کے بعد اچانک اس نے اس ڈیول کی بیوی کا ہاتھ شہوت کے انداز میں پکڑ لیا اور پھر چھوڑ کر چلا گیا۔

سقا کے اس عمل پر جیولر کی بیوی بہت غم زدہ ہوگی۔ اور ان کے آنکھوں سے آنسو بہنے لگے۔ اس دوران اس کا شوہر اپنی دکان سے واپس کھانا کھانے کے لئے آ گیا بیوی کو روتی ہوئی دے کر ان سے پوچھا کہ کیوں رو رہی بیوی نے سارا ماجرا سنایا تو جیولر بہت غم زدہ ہوگیا اور بیوی کو بتایا کہ آج میری دکان پر ایک بہت ہی خوبصورت ہاتھوں والی لڑکی آگئی تھی جب میں نے ان کو اور زیور بھی تو ان کا ہاتھ شہوت سے دبا دیاتو یہ میرے اوپر قرض ہو گیا تھا لہٰذا پانی والے نے میری بیوی کا ہاتھ دبا کر مجھ سے یہ قرض اتار دیا لیکن آج میں تیرے سامنے سچی توبہ کرتا ہوں اور آج کے بات کسی کے ساتھ ایسا نہیں کروں گا۔ لیکن قرضہ قا آپ کے ساتھ جو کرے گا اس کے بارے میں مجھے ضرور آگاہ کیجیے گا۔ میں تمہارے سامنے سچی توبہ کر تا ہوں ،کہ آئندہ کبھی ایسا نہیں کروں گا – البتہ مجھے ضرور بتانا کہ سقا کل تمہارے ساتھ کیا معاملہ کرتا ہے، دوسرے دن سقا جب پانی ڈالنے کے لئے آیا تو اس نے جیولر کی بیوی سے کہا کہ میں بہت شرمندہ ہوں، کل مجھے شیطان نے ورغلا کر براکام کروا دیا ،میں نے سچی توبہ کرلی ہے آپ کو میں یقین دلاتا ہوں کہ آئندہ ایسا کبھی نہیں ہوگا-عجیب بات ہے کہ جیولر نے غیر عورت کو ہاتھ لگانے سے توبہ کر لی تو غیر مردوں نے اس کی عورت کو ہاتھ لگا نے سے توبہ کر لی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *