میں نے ماں سے دعا کے لیے کہا مگر اس نے میرے لیے دعا کرنے سے انکار کر دی

کہتے ہیں کہ ماں کی دعا جنت کی ہوا۔ اگر ہم اس بات کو گہرائی سے دیکھے۔ تو اس کا مطلب یہ نہیں کہ جب ماں کی دعا اپ پر لگ جائے تو آپ جنت میں جائیں گے۔ بلکہ اس کا مطلب یہ ہے جب آپ سے ماں باپ راضی ہو اور ان کی دعائیں اپ پر لگ جائے۔ تو یہ دنیا بھی آپ کے لئے جنت بن جاتی ہے اور آخرت بھی۔ کائنات نیوز!اللہ تعالیٰ نے ہر انسان کی زندگی میں ایک لمحہ ضرور ایسا رکھا ہوتا ہے جو کہ اس کی زںدگی کو بدل دینے کا باعث بنتا ہے۔

ایسا ہی ایک لمحہ جب جنید جمشید کی زندگی میں آیا تو انہیں ایک گلوکار سے ایک مبلغ اور نعت خواں بنا گیا اور ایسا ہی ایک لمحہ پشتو فلموں کے صف اول کے اداکار کی زندگی میں آیا۔تو انکو بشیر احمد سے صوفی بشیر احمد بنا گیاستر کی دہائی میں پشتو فلمیں پاکستان فلم انڈسٹری کے لیے پنچابی فلموں کے بعد سب سے بڑا بقا کا ذریعہ تھیں اور ان کو دیکھنے والے لوگوں کی بڑی تعداد موجود تھی اور اس کے اداکاروں کی حیثیت کسی بھی طرح پنچابی فلموں کے اداکاروں سے کم نہ ہوتی تھی- اور ان فلموں کے چاہنے والے ان ادکاروں کو بہت محبت سے نوازتے تھے اور ان فلموں کی شوٹنگ صرف پاکستان میں نہیں بلکہ دنیا بھر میں کی جاتی تھی- ایسے میں بشیر احمد ان فلموں کے مرکزی کردار ہونے کے سبب دنیا بھر میں شوٹنگ کے حوالے سے گھومتے تھے اور انہوں نے ستر سے زیادہ فلموں میں کام کیا تھامگر بشیر احمد کا تعلق ایک انتہائی قدامت پرست گھرانے سے تھا جو کہ ان کے اس کام کو سخت نا پسندیدگی کی نظر سے دیکھتے تھے-

خاص طور پر ان کی والدہ ان کے فلموں میں کام کرنے کے سخت مخالف تھیں اور انہوں نے اپنے بیٹے کو اپنی دعاؤں سے یہ کہہ کر محروم کر دیا تھا کہ چونکہ تمھارا ذرائع آمدنی حلال نہیں ہے اس لیے میں تمھارے لیے کسی قسم کی کوئی دعا نہیں کروں گی۔صوفی بشیر احمد کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ ایک دفعہ وہ کسی مشکل میں گرفتار ہو گئے تو وہ اپنی ماں کے پاس پشاور آئے اور انہوں نے ان سے دعا کی درخواست کی- مگر ان کی ماں نے ان کی اس درخواست کو یہ کہہ کر رد کر دیا کہ وہ اللہ کے نافرمان کے لیے دعا نہیں کریں گی۔ماں سے ملنے کے بعد جب وہ لاہور کے لیے روانہ ہوئے تو وہاں راستے میں ان کا شدید ایکسیڈنٹ ہو گیا جس نے انہیں اس بات کا احساس دلا دیا کہ ماں کی دعا کے بغیر وہ کچھ بھی نہیں ہیں-یہ لمحہ ان کی زندگی کو بدلنے کا باعث بن گیا اور انہوں نے ایکٹنگ چھوڑنے کا فیصلہ کر لیا- جس پر لوگوں نے ان سے کہا کہ اگر ایکٹنگ چھوڑ دیں گے تو وہ کھائیں گے کہاں سے مگر انہوں نے اللہ پر توکل کرتے ہوئے ایکٹنگ چھوڑ دی اس کے بعد انہوں نے تبلیغ اسلام کو اپنا اوڑھنا بچھونا بنا لیا- انہوں نے لاہور کے ایک کمرے کے چھوٹے سے گھر میں رہائش اختیار کر لی اور ہر روز صبح اٹھ کر موٹر سائکل پر بیٹھ کر نکل جاتے ہیں-

ان کے ہاتھوں میں ایک لاؤڈ اسپیکر ہوتا ہے جس کے ذریعے وہ لوگوں تک اللہ کا پیغام پہنچاتے ہیں اور انہیں نماز پڑھنے اور اللہ کے راستے پر چلنے کا حکم دیتے ہیں- اس کے علاوہ باقی سارا وقت وہ اللہ کی عبادت پر صرف کرتے ہیں ان کا یہ ماننا ہے کہ اس طرح وہ ایک جانب تو اپنے رب کو راضی کرنے کی کوشش کرتے ہیں اور دوسرا اپنی ماں کی خزشنودی کا باعث بنتے ہیں جو کہ اب اس دنیا میں نہیں ہیں۔ دوستو اگر آپ چاہتے ہو کہ آپ کی دنیا اور آخرت سنور جائے تو اپنے ماں باپ کو راضی کر اور کبھی بھی ان کی دل مت دکھ۔ اگر آپ کو ہماری تحریر پسند آئے ہو تو اپنے دوستوں کے ساتھ ضرور شیئر کریں اور کمنٹس میں اپنی رائے ضرور دے اور ہمارے پیج کو ضرور فالو کریں شکریہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *