ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ، ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺍﮨﯽ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﻮﮞ، ﻣﯿﺮﺍ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺍﻟﻠّﻪ ﮐﺎ ﻭﻟﯽ ﮨﮯ

ایک بادشاہ عوام کی خبر گیری کے لیے اپنا بھیس بدل کر نکلتا تھا۔ ایک دن اپنے وزیر کے ساتھ شہر کی طرف چل پڑا، شہر سے گزرتے ہوئے ایک سائڈ پر ایک آدمی کو زمین پر پڑا دیکھا۔ بادشاہ ان کے پاس پہنچا اور ان کو ہلا کر اٹھانا چاہا، لیکن وہ نہیں اٹھا کیوں کے وہ مر چکا تھا۔ بادشاہ کو اس بات پر حیرت بھی ہوئی اور غصہ بھی آیا کہ راستے پر آدمی مرا ہوا پڑا ہے۔

کوئی اس کو اٹھانے والا اور خ پوچھنے و والا نہیں۔ بادشاہ نے لوگوں کو مدد کے لئے آواز دی چونکہ بادشاہ نے اپنی بھیس بدلی تھی۔ تو اس لیے کوئی پہچان نہ سکے۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﺍﺳﮑﻮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ؟ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﯾﮧ ﺑﮩﺖ ﺑُﺮﺍ ﺍﻭﺭ ﮔﻨﺎﮦ ﮔﺎﺭ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮨﮯ۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﺍﻣﺖ ﺭﺳﻮﻝؑ ﻧﮩﯿﮟ؟ ﯾﮧ ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﮐﯽ ﻻﺵ ﺍﭨﮭﺎﮐﺮ ﺍﺳﮑﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺩﯼ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﻧﮯ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﯽ ﻻﺵ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﺗﻮ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﺎ ﻭﺯﯾﺮ ﻭﮨﯿﮟ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﺎ ﺭﻭﻧﺎ ﺳﻨﺘﮯ ﺭﮨﮯ۔ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ، ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺍﮨﯽ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﻮﮞ، ﻣﯿﺮﺍ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺍﻟﻠّﻪ ﮐﺎ ﻭﻟﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﻧﯿﮏ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﺑﮍﺍ ﻣﺘﻌﺠﺐ ﮨﻮﺍ، ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﯾﮧ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﻮﮒ ﺗﻮ ﺍﺱﮐﯽ ﺑﺮﺍﺋﯽ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻮ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﯽ ﻣﯿﺖ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﻟﮕﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺗﯿﺎﺭ ﻧﮧ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﯾﮩﯽ ﺗﻮﻗﻊ ﺗﮭﯽ۔ ﺩﺭﺍﺻﻞ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮨﺮ ﺭﻭﺯ ﺷﺮﺍﺏ ﺧﺎﻧﮯ ﺟﺎﮐﺮ ﺷﺮﺍﺏ ﺧﺮﯾﺪﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺮ ﻻ ﮐﺮ ﮔﮍﮬﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺎ ﺩﯾﺘﺎ، ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺘﺎ ﮐﮧ ﭼﻠﻮ ﮐﭽﮫ ﺗﻮ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﮐﺎ ﺑﻮﺟﮫ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﻠﮑﺎ ﮨﻮ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺑُﺮﯼ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﻮ ﺍﯾﮏ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﺍﺟﺮﺕ ﺩﮮ ﺩﯾﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺘﺎ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﻟﮯ

ﮐﻮﺋﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﻧﮧ ﺁﺋﮯ۔ ﮔﮭﺮ ﺁﮐﺮ ﮐﮩﺘﺎ، ﺍﻟﺤﻤﺪ ﺍﻟﻠّﻪ ! ﺁﺝ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﭽﮫ ﺑﻮﺟﮫ ﮨﻠﮑﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﻥ ﺟﮕﮩﻮﮞ ﭘﺮ ﺁﺗﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺳﮯ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮫﻭ ! ﺟﺲ ﺩﻥ ﺗﻢ ﻣﺮﮔﺌﮯ ﻟﻮﮒ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻧﮧ ﻏﺴﻞ ﺩﯾﻨﮕﮯ، ﻧﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﭘﮍﮬﺎﺋﻨﮕﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺩﻓﻨﺎﺋﻨﮕﮯ۔ ﻭﮦ ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﮩﺘﮯ ﮐﮧ ﮔﮭﺒﺮﺍﻭ ﻧﮩﯿﮟ، ﺗﻢ ﺩﯾﮑﮭﻮﮔﯽ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﻭﻗﺖ ﮐﺎ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ، ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﻟﯿﺎ ﭘﮍﮬﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﯾﮧ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ، ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮨﻮﮞ، ﮐﻞ ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻏﺴﻞ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ، ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯِ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﮬﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺪﻓﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﮨﻢ ﮐﺮﻭﺍﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺍﻭﻟﯿﺎﺀ ﺍﻭﺭ ﮐﺜﯿﺮ ﻋﻮﺍﻡ ﻧﮯ ﭘﮍﮬﺎ . ﺁﺝ ﮨﻢ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﯾﺎ ﻣﺤﺾ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﺳُﻦ ﮐﺮ ﺍﮨﻢ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﮔﺮ ﮨﻢ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﮭﯿﺪ ﺟﺎﻥ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺯﺑﺎﻧﯿﮟ ﮔﻮﻧﮕﯽ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﺧﺪﺍﺭﺍ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﻏﻠﻂ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﯿﺎﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﮐﯿﺎ ﻭﮦ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﮧ ﻧﮩﯿﮟ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *